☰  Help  Calendar  Member List  Search  Portal
 Portal  Search  Member List  Calendar
Hello There, Guest!  Register  Login

Saleem Malik batting as both right and left handed batsman


#1
یہ ۱۹۸۶ میں ویسٹ انڈیز نے پاکستان کا دورہ کیا اور نیچے دی گیے ویڈیو فیصل آباد میں کھیلے گیے پہلے ٹیسٹ میچ کی ہے

اس میچ کی خاص بات اس وقت کے پاکستان کے بہترین کھلاڑی سلیم ملک کی دونوں ھاتھوں یعنی الٹے ھاتھ اور سیدھے ھاتھ سے بیٹنگ کرنا ہے۔ اور اس کی وجہ یہ ہے کے پہلی اننگز میں کورٹنی والش کی ایک گیند پر ان کے ھاتھ میں فریکچر ہو گیا تھا اور وہ پاویلین واپس لوٹ گیے تھے۔

لیکن ان کو پھر واپس آنا پڑا کھیلنے کے لیے تاکے پاکستان کو دوسری اننگز میں بڑی لیڈ مل جایے۔ 

تو سلیم ملک اس طرح ۱۱ نمبر پر بیٹنگ کرنے کے لیے واپس آیے اور ویسٹ انڈیز کے باولرز کا سامنا کیا۔

انہوں نے ۴۱ منٹ تک بیٹنگ کی اور ۱۴ بالز پر ۳ رنز بنا کر وسیم اکرم کا بہت ساتھ دیا جنہوں نے نصف سنچری بنای۔

پاکستان نے یہ میچ ۱۸۶ رنز سے جیت لیا تھا۔



 Reply
#2
Great find!

I think Abdul Qadir took 5 (or may be 6) wickets in second innings and West Indies were all out under 60 or 70 runs.
 Reply
#3
Abdul Qadir took 6 wickets while Imran Khan took 4. West Indies lost by 53 runs and this is 25th lowest score in test matches.
 Reply
#4
سلیم ملک کی سب سے بہترین اننگز بھارت کے خلاف تھی ۱۹۸۷ میں کلکتہ میں جب پاکستان کو ۴۰ اوورز میں جیتنے کے لیے ۲۳۸ رنز کو ضرورت تھی اور ایک وقت پر پاکستان کے ۱۶۱ رنز پار ۵ کھلاڑی آوٹ ہو چکے تھے اور جیتنے کے لیے ۷۷ رنز کی ضرورت تھی جب سلیم ملک نے انٹری دی۔ پھر جوان نے ان ۷۷ رنز میں سے ۷۲ رنز بنا کر پاکستان کو فتح دلوای۔ اور وہ بھی صرف ۳۶ بالز پر۔

بندہ اچھا تھا لیکن میچ فکسنگ کے چکر میں پھنس گیا۔ ویسے تو اور بھی لوگ شامل تھے اس میں لیکن اس پر زیادہ برای آی اور یہ رگڑا گیا۔ وہ کہتے ہیں نا ’بندہ ہیرا ہے بس تھوڑا س کیڑا ہے‘ تو وہی والا حساب ہے اس کے ساتھ۔
 Reply
#5
(11-07-2017, 03:45 PM) KakaSipahi Wrote: سلیم ملک کی سب سے بہترین اننگز بھارت کے خلاف تھی ۱۹۸۷ میں کلکتہ میں جب پاکستان کو ۴۰ اوورز میں جیتنے کے لیے ۲۳۸ رنز کو ضرورت تھی اور ایک وقت پر پاکستان کے ۱۶۱ رنز پار ۵ کھلاڑی آوٹ ہو چکے تھے اور جیتنے کے لیے ۷۷ رنز کی ضرورت تھی جب سلیم ملک نے انٹری دی۔ پھر جوان نے ان ۷۷ رنز میں سے ۷۲ رنز بنا کر پاکستان کو فتح دلوای۔ اور وہ بھی صرف ۳۶ بالز پر۔

بندہ اچھا تھا لیکن میچ فکسنگ کے چکر میں پھنس گیا۔ ویسے تو اور بھی لوگ شامل تھے اس میں لیکن اس پر زیادہ برای آی اور یہ رگڑا گیا۔ وہ کہتے ہیں نا ’بندہ ہیرا ہے بس تھوڑا س کیڑا ہے‘ تو وہی والا حساب ہے اس کے ساتھ۔


So you are saying if someone is caught doing match fixing then we should let it slide under the carpet?
 Reply
#6
(11-07-2017, 10:22 PM) hussain Wrote:
(11-07-2017, 03:45 PM) KakaSipahi Wrote: سلیم ملک کی سب سے بہترین اننگز بھارت کے خلاف تھی ۱۹۸۷ میں کلکتہ میں جب پاکستان کو ۴۰ اوورز میں جیتنے کے لیے ۲۳۸ رنز کو ضرورت تھی اور ایک وقت پر پاکستان کے ۱۶۱ رنز پار ۵ کھلاڑی آوٹ ہو چکے تھے اور جیتنے کے لیے ۷۷ رنز کی ضرورت تھی جب سلیم ملک نے انٹری دی۔ پھر جوان نے ان ۷۷ رنز میں سے ۷۲ رنز بنا کر پاکستان کو فتح دلوای۔ اور وہ بھی صرف ۳۶ بالز پر۔

بندہ اچھا تھا لیکن میچ فکسنگ کے چکر میں پھنس گیا۔ ویسے تو اور بھی لوگ شامل تھے اس میں لیکن اس پر زیادہ برای آی اور یہ رگڑا گیا۔ وہ کہتے ہیں نا ’بندہ ہیرا ہے بس تھوڑا س کیڑا ہے‘ تو وہی والا حساب ہے اس کے ساتھ۔


So you are saying if someone is caught doing match fixing then we should let it slide under the carpet?


i meant to say there were other people involved too but never caught probably they were blue eyed or highly connected. SM received due punishment and after that there is no reason to keep punishing him for this.
 Reply
 
Possibly Related Threads...
 
Forum Jump:

Users browsing this thread: